Aaj Roothe Hue Sajan Ko Bohat Yaad Kiya (Saghar Siddiqui) - Urdu Poetry (Ghazal) by RJ Imran Sherazi




Aaj Roothay Hue Sajan Ko Bohat Yaad Kiya
Apnay Ujray Huay Gulshan Ko Bohat Yaad Kiya
Jab Kabhi Gardish-e- Taqdeer Ne Gheara Hai Hamain
Gaisua-e- Yaar Ki Uljhan Ko Bohat Yaad Kiya
Shama Ki Jot Pe Jaltay Huay Parwanon Ny
Ik Tere Shola Daman Ko Bohat Yaad Kiya
Jis Ke Mathay Py Nayee Subah Ka Jhoomar Hoga
Hum Ne Uss Waqt Ki Dulhan Ko Bohat Yaad Kiya
Aaj Tootay Huay Sapnon Ki Bohat Yaad Aayee
Aaj Beetay Huay Sawan Ko Bohat Yaad Kiya
Hum Sar-e- Tor Bhi Mayoos-e- Tajalli Hi Rahay
Is Dar-e- Yaar Ki Chilman Ko Bohat Yaad Kiya
Mutmayeen Ho Hi Gaye Dam-o- Qafas Main Saghar
Hum Aseeron Ne Nasheman Ko Bohat Yaad Kiya..!!

Poet: Saghar Siddiqui
Voice: Imran Sherazi

آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد  کیا
اپنے اجڑے ہوئے گلشن کو بہت یاد کیا
جب کبھی گردشِ تقدیر نے گھیرا ہے ہمیں
گیسوئے یار کی الجھن کو بہت یاد کیا
شمع کی جوت پہ جلتے ہوئے پروانوں نے
اک ترے شعلہ دامن کو بہت یاد کیا
جس کے ماتھ ے پہ نئی صبح کا جھومر ہو گا
ہم نے اس وقت کی دلہن کو بہت یاد کیا
آج ٹوٹے ہوئے سپنوں کی بہت یاد آئی
آج بیتے ہوئے ساون کو بہت یاد کیا
ہم سر طور بھی مایوس تجلی ہی رہے
اس در یار کی چلمن کو بہت یاد کیا
مطمئن ہو ہی گئے دام و قفس میں ساغر
ہم اسیروں نے نشیمن کو بہت  یاد کیا

شاعر: ساغر صدیقی
آواز: عمران شیرازی



No comments :

No comments :

Post a Comment