Baat Niklegi To Phir Door Talak Jaye Gi | Urdu Poetry by Kafeel Aazer




Baat niklegi to phir door talak jaayegi,

Log be-vajah udaasi ka sabab poochhen ge,
Yeh bhi poochhen ge ki tum itni parishaan kiyon ho,
Ungliyaan uthen gi sookhe hue baalon ki taraf,
Ik nazar dekhen ge guzre hue saalon ki taraf,

Chooriyon par bhi kai tanz kiye jaayen ge,
Kaanpte haathon pe bhi fikre kase jaayen ge,
Log zaalim hain, har ik baat ka taana dein ge,
Baaton baaton mein mera zikr bhi ley aayen ge,

Unki baaton ka zara sa bhi asar mat lena,
Varna chehre ke taasur se samajh jaayen ge,
Chaahe kuchh bhi ho sawaalaat na karna un se,
Mere baare mein koi baat na karna un se,

Baat niklegi to phir door talak jaayegi

Poet: Kafeel Aazer Amrohvi
voice: Imran Sherazi

بات نکلے گی توپھر دور تلک جائے گی
لوگ بے وجہ اداسی کا سبب پوچھیں گے

یہ بھی پوچھیں گے کہ تم اتنی پریشان کیوں ہو
انگلیاں اٹھیں گی سوکھے ہوئے بالوں کی طرف
اک نظر دیکھیںگے گزرے ہوئے سالوں کی طرف

چوڑیوں پر بھی کئی طنز کیے جائیں گے
کانپتے ہاتھں پر فقرے بھی کسے جائیں گے
لوگ ظالم ہیں ہر اک بات کا طعنہ دیں گے
باتوں باتوں میں میرا ذکر بھی لے آئیں گے
ان کی باتوں کا ذرا سا بھی اثر مت لینا
ورنہ چہرے کے تاثر سے سمجھ جائیں گے
چاہے کچھ بھی سوالات نہ کرنا ان سے
میرے بارے میں کوئی بات نہ کرنا ان سے
بات نکلے گی تو پھر دور تلک جائے گی

شاعر: کفیل آذرامروہی
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment