Itne Be Jaan Saharay To Nahin Hote Na | Urdu Poetry by Zain Shakeel




itne bejaan saharay to nahi hotay naa
dard darya k kinaray to nahi hotay naa

ranjishen hijr ka mayaar ghata deti hain
rooth janay se guzaray to nahi hotay naa

raas rehti hai muhabbat bhi kayi logon ko
wo b arshon se utaray to nahi hotay naa

hont seenay se kahan baat chupi rehti hai
band ankhon se isharay to nahi hotay naa

hijr to aor muhabbat ko barha deta hai
ab muhabbat main khasaray to nahi hotay naa

zain ik shakhs hi hota hai mata e jaan bhi
dil main ab loag bhi saray to nahi hotay naa

Poet: Zain Shakeel
Voice: Imran Sherazi

اتنے بے جان سہارے تو نہیں ہوتے ناں
درد دریا کے کنارے تو نہیں ہوتے ناں

رنجشیں ہجر کا معیار گھٹا دیتی ہیں
روٹھ جانے سے گزارے تو نہیں ہوتے ناں

راس رہتی ہے محبت بھی کئی لوگوں کو
وہ بھی عرشوں سے اتارے تو نہیں ہوتے ناں

ہونٹ سینے سے کہاں بات چھپی رہتی ہے
بند آنکھوں سے اشارے تو نہیں ہوتے ناں

ہجر تو اور محبت کو بڑھا دیتا ہے
اب محبت میں خسارے تو نہیں ہوتے ناں

زین اک شخص ہی ہوتا ہے متاعِ جاں بھی
دل میں اب لوگ بھی سارے تو نہیں ہوتے ناں

شاعر: زین شکیل
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment