Kamal e Zabt Ko Khud Bhi To Aazmaon Gi - Urdu Poetry by Parveen Shakir




Kamal e zabt ko khud bhi to aazmaon gi
mein apne haath se us ki dulhan sajaon gi

sapurd kar ke usay chandni ke hathon mein
mein apnay ghar ke andheron ko lout aaon gi

badan ke karb ko woh bhi samjh na paye ga
mein dil mein roaon gi aankhon mein muskraon gi

woh kya gaya ko rafaqat ke saray lutf gaye
mein kis se rooth sakun gi kisay manaon gi

ab us ka fun kisi aor se hua mansoob
mein kis ki nazam akele mein gungunaon gi

woh aik rishta e be naam bhi nahin laiken
mein ab bhi us ke ishaaron pe sar jhukaon gi

bicha diya tha gulabon ke sath apna wajood
woh so ke uthay to khawabon ki raakh uthaon gi

samaaton mein ghanay junglon ki saansein hein
mein ab kabhi teri awaz sun na paon gi

jawaz dhoondh raha tha nai mohabbat ka
woh keh raha tha ke mein us ko bhool jaon gi

Poet: Parveen Shakir
Voice: Imran Sherazi

کمال ضبط کو خود بھی تو آزماوں گی
میں اپنے ہاتھ سے اس کی دلہن سجاوں گی

سپرد کر کے اسے چاندنی کے ہاتھوں میں
میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آوں گی

بدن کے کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پائے گا
میں دل میں رووں گی آنکھوں میں مسکراوں گی

وہ کیا گیا کہ رفاقت کے سارے لطف گئے
میں کس سے روٹھ سکوں گی کسے مناوں گی

اب اس کا فن کسی اور سے ہوا منسوب
میں کس کی نظم اکیلے میں گنگناوں گی

وہ ایک رشتہ بے نام بھی نہیں لیکن
میں اب بھی اس کے اشاروں پہ سر جھکاوں گی

بچھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود
وہ سو کے اٹھے تو خوابوں کی راکھ اٹھاوں گی

سماعتوں میں گھنے جنگلوں کی سانسیں ہیں
میں اب کبھی تری آواز سن نہ پاوں گی

جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محبت کا
وہ کہہ رہا تھا کہ میں اس کو بھول جاوں گی

شاعرہ: پروین شاکر
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment