Ku Ba Ku Phail Gai Baat Shanasai Ki - Urdu Poetry by Parveen Shakir




Ku-ba-ku phail gai baat shanasai ki
Us ne Khushbu ki tarah meri pazirai ki

Kaise keh doon ke mujhe chor diya hai us ne
Baat to sach hai magar baat hai rusvai ki

Us ne jalati hui peshani pe jab haath rakha 
Rooh tak aa gai taseer maseehai ki

Ab Bhi barsaat ki raaton mein badan tootata hai
jaag uthati hein ajab khawhishein angraayi ki

Tera pehlu tere dil ki tarah abaad rahe
Tujh pe guzray na qayamat shab-e-tanhai ki

Woh kahin bhi gaya lauta to mere paas aya
Bas yahi baat hai achchi mere harjai k. 

Poet: Parveen Shakir
Voice: Imran Sherazi

کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی
اُس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اُس نے
بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

اُس نے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا
روح تک آگئی تاثیر مسیحائی کی

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے
جاگ اُٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

تیرا پہلو تیرے دل کی طرح آباد رہے
تجھ پہ گزرے نہ قیامت شبِ تنہائی کی

وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو میرے پاس آیا
بس یہی بات ہے اچھی میرے ہرجائی کی

شاعر: پروین شاکر
آواز: عمران شیرازی

No comments :

No comments :

Post a Comment