Kya Zamana Tha Ke Hum Roz Mila Kartay Thay | Urdu Poetry by Nasir Kazmi




Kya Zamana Tha ke hum roz mila kartay thay
raat bhar chaand ke hamraah phira kartay thay

jahan tanhaiyan sar phor ke so jaati hein
in makaanon mein ajab log raha kartay thay

kar diya aaj zamanay ne unhein bhi majboor
kabhi yeh log mere dukh ki dawa kartay thay

dekh kar jo humein chup chaap guzar jaata hai
kabhi is shakhs ko hum piyar kiya kartay thay

itefaqaat-e-Zamana bhi ajab hein Nasir
Aaj woh dekh rahay hein jo suna kartay thay

Poet: Syed Nasir Raza Kazmi
Voice: Imran Sherazi

کیا زمانہ تھا کہ ہم روز ملا کرتے تھے
رات بھر چاند کے ہمراہ پھرا کرتے تھے

جہاں تنہائیاں سر پھوڑ کے سو جاتی ہیں
ان مکانوں میں عجب لوگ رہا کرتے تھے

کر دیا آج زمانے نے انھیں بھی مجبور
کبھی یہ لوگ میرے دکھ کی دوا کرتے تھے

دیکھ کر جو ہمیں چپ چاپ گزر جاتا ہے
کبھی اس شخص کو ہم پیار کیا کرتے تھے

اتفاقاتِ زمانہ بھی عجب ہیں ناصرؔ
آج وہ دیکھ رہے ہیں جو سنا کرتے تھے

شاعر: سید ناصر رضا کاظمی
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment