Mein Mar Mita To Woh Samjha Yeh Inteha Thi Meri - Urdu Poetry by Ahmad Faraz




Mein Mar Mita to woh samjha yeh inteha thi meri
ussay khabar hi na thi khaak kimiya thi meri

mein chup hua to woh samjha ke baat khatam hui
phir iss ke baad aawaz ja baja thi meri

jo taanazan tha meri poshish-e-dareedah par
usi ke dosh po rakhi hui qaba thi meri

mein us ko yaad karun bhi to yaad aata nahin
mein us ko bhool gaya hoon yahi saza thi meri

shikast de gaya apna gharoor hi us ko
wagarna uss ke muqabil bisaat kya thi meri

koi bhi kuway mohabbat se phir nahin guzara
tu shehar-e-ishq mein aakhari sada thi meri

jo ab ghmand se sar ko uthaye phirta hai
isi tarah ki to makhlooq khaak e pa thi meri

mein uss ko dekhta rehta tha hairaton se Faraz
yeh zindagi se taaruf ki ibtada thi meri

Poet: Ahmad Faraz
Voice: Imran Sherazi

میں مر مٹا تو وہ سمجھا یہ انتہا تھی مری
اسے خبر ہی نہ تھی خاک کیمیا تھی مری

میں چپ ہوا تو وہ سمجھا کہ بات ختم ہوئی
پھر اس کے بعد تو آواز جا بجا تھی مری

جو طعنہ زن تھا مری پوشش دریدہ پر
اسی کے دوش پہ رکھی ہوئی قبا تھی مری

میں اس کو یاد کروں بھی تو یاد آتا نہیں
میں اس کو بھول گیا ہوں یہی سزا تھی مری

شکست دے گیا اپنا غرور ہی اس کو
وگرنہ اس کے مقابل بساط کیا تھی مری

کوئی بھی کوئے محبت سے پھر نہیں گزرا
تو شہر عشق میں کیا آخری صدا تھی مری

جو اب گھمڈ سےسر کو اٹھا ئے پھرتا ہے
اسی طرح کی تو مخلوق خاک پا تھی مری

میں اس کو دیکھتا رہتا تھا حیرتوں سے فرازؔ
یہ زندگی سے تعارف کی ابتدا تھی مری

شاعر: احمد فراز
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment