Mohabbatein Jab Shumar Karna | Urdu Poetry by Noshi Gilani with Lyrics




Mohabbatein Jab Shumar Karna To Sazishein Bhi Shumar Karna,
Jo Mere Hissey Mein Aaien Hein Woh Aziayatein Bhi Shumar Karna

Jalaye Rakhon Gi Subha Tak Main Tumhare Rastay Mein Apni Aankhein
Magar Kahin Zabt Toot Jaye To Barishein Bhi Shumar Karna

Jo Hurf Loh-e-Wafa Pe Likhey Howe Hein In Ko Bhi Dekh Lena
Jo Raegaan Ho Gain Woh Sari Ebaratein Bhi Shumar Karna

Ye Sardiyon Ka Udaas Mousam Ke Dhadkanein Baraf Ho Gaein Hein
Jab In Ki Yakh-Bastagi Parakhna, Timazatein Bhi Shumar Karna

Tum Apni Majboriyon Ke Qissay Zaroor Likhna Wazahaton Se
Jo Meri Aankhon Mein Jal Bujhi Hein Woh Khawishein Bhi Shumar Karna

Poet: Noshi Gilani
Voice: Imran Sherazi

محبتیں جب شمار کرنا تو سازشیں بھی شمار کرنا
جو میرے حصے میں آئی ہیں وہ اذیتیں بھی شمار کرنا

جلائے رکھوں گی صبح تک میں تمھارے رستے میں اپنی آنکھیں
مگر کہیں ضبط ٹوٹ جائے تو بارشیں بھی شمار کرنا

جو صرف لوح وفا پر لکھے ہوئے ہیں ان کو بھی دیکھ لینا
جو رائیگاں ہو گئیں وہ ساری عبارتیں بھی شمار کرنا

یہ سردیوں کا اداس موسم کہ دھڑکنیں برف ہو گئیں ہیں
جب ان کی یخ بستگی پرکھنا تمازتیں بھی شمار کرنا

تم اپنی مجبوریوں کے قصے ضرور لکھنا وضاحتوں سے
جو میری آنکھوں میں جل بجھی ہیں وہ خواہشیں بھی شمار کرنا

شاعرہ: نوشی گیلانی
آواز: عمران شیرازی



No comments :

No comments :

Post a Comment