Tooti Hai Meri Neend Magar Tum Ko Iss Se Kya - Urdu Poetry by Parveen Shakir




Tooti Hai Meri Neend Magar Tum Ko Iss Se Kya
Bajtay Rahen Hawaon Se Dar Tum Ko Iss Se Kya
Kat Jain Meri Soch Ke Par Tum Ko Iss Se Kya
Aoron ka hath thamo unhen raasta dikhao
Mein bhool jaon apna hi ghar tum ko is se kya
Abre Guraiz pa ko barasnay se kya gharz
Seepi mein bananay no paye gohar tum ko is se kya
Lay jain mujh ko maal e ghaneemat ke sath udav
Tum ne to daal di hai sipar tum ko iss se kya
tum ne to thak ke dasht mein khaimay laga liye
tanha katay kisi ka safar tum ko is se kya

Poet: Parveen Shakir
Voice : Imran Sherazi

ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا
بجتے رہیں ہواوں سے در تم کو اس سے کیا

تم موج موج مثل صبا گھومتے رہو
کٹ جائیں میری سوچ کے پر تم کو اس سے کیا

اوروں کا ہاتھ تھامو انھیں راستہ دکھاو
میں بھول جاوں اپنا ہی گھر تم کو اس سے کیا

تم نے تو تھک کے دشت میں خیمے لگا لیے
تنہا کٹے کسی کا سفر تم کو اس سے کیا

شاعرہ : پروین شاکر
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment