Woh Kehti Hai Suno Janaa (Atif Saeed) - Urdu Poem by RJ Imran Sherazi with Lyrics




woh kehti hai suno jana, mohabat mom ka ghar hai
tapsh yeh bad gumani ki kahen pighla na de is ko
mein kehta hoon k jis dil mein zara bhi bad gumani ho
wahan kuch aor ho to ho mohabbat ho nahin sakti
woh kehti hai sada aisay hi kya tum mujh ko chaho ge
ke mein is mein kami bilkul gawara kar nahin sakti
mein kehta hoon mohabbat kya hai yeh tum ne sikhaya hai
mujhe tum se mohabbat ke siwa kuch bhi nahin aata
woh kehti hai judai se bohat darta hai mera dil
ke khud ko tum se hat kar dekhna mumkin nahin hai ab
mein kehta hoon yahi khadshay bohat mujh ko satatay hein
magar such hai mohabbat mein judai sath chalti hai
woh kehti hai batao kya mere bin ji sako ge tum?
meri yaden meri aankhen meri baten bhula do ge?
mein kehta hoon kabhi is baat par socha nahin mein ne
agar ik pal ko bhi sochon tw sansen ruknay lagti hein
woh kehti hai tumhen mujh se mohabbat is qadar kiyon hai
ke mein ik aam si larki tumhen kiyon khas lagti hoon
mein kehta hoon kabhi khud ko meri aankhon se tum dekho
meri dewaangi kiyon hai yeh khud hi jaan jao gi
woh kehti hai mujhe waarftagi se dekhtay kiyon ho?
ko mein khud ko bohat hi qeemti mehsoos karti hoon
mein kehta hoon mata e jaan bohat anmol hoti hai
tumhen jab dekhta hoon zindagi mehsoos karta hoon
woh kehti hai mujhe ilfaz ky jugnu nahin miltay
tumhen batla sakoon dil mein mere kitni mohabbat hai
mein kehta hoon mohabbat to nighaon se chalakti hai
tumhari khamshi mujh se tumhari baat karti hai
woh kehti hai batao na kisay khonay se dartay ho?
batao kon hai woh jis ko io mausam bulatay hein
mein kehta hoon yeh meri shairy hai aaina dil ka
zara dekho batao kya tumhen is mein nazar aya
woh kehti hai ko atif g bohat baten banatay ho
magar such hai k yeh baten bohat hi shaad rakhti hein
mein kehta hoon io sab baten fasanay ik bahana hein
k pal kuch zindgaani k tumhare sath katt jain
phir is k baad khamoshi ka dilkash raqs hota hai
nighain bolti hein aor lab khamosh rehtay hein

Poet: Atif Saeed
Voice: Imran Sherazi

وہ کہتی ہے سنو جاناں محبت موم کا گھر ہے
تپش یہ بد گمانی کی کہیں پگھلا نہ دے اس کو
میں کہتا ہوں کہ جس دل میں ذرا بھی بدگمانی ہو
وہاں کچھ اور ہو تو ہو محبت ہو نہیں سکتی

وہ کہتی ہے سدا ایسے ہی کیا تم مجھ کو چاہو گے
کہ میں اس میں کمی بالکل گوارا کر نہیں سکتی
میں کہتاہوں محبت کیا ہے یہ تم نے سکھایا ہے
مجھے تم سے محبت کے سوا کچھ بھی نہیں آتا

وہ کہتی ہے جدائی سے بہت ڈرتا ہے میرا دل
کہ خود کو تم سے ہٹ کر دیکھنا ممکن نہیں ہے اب
میں کہتا ہوں یہی خدشے بہت مجھ کو ستاتے ہیں
مگر سچ ہے محبت میں جدائی ساتھ چلتی ہے

وہ کہتی ہے بتاو کیا میرے بن جی سکو گے تم
میری یادیں میری آنکھیں میری باتیں بھلا دو گے
میں کہتا ہوں کبھی اس بات پر سوچا نہیں میں نے
اگر اک پل کو بھی سوچوں تو سانسیں رکنے لگتی ہیں

وہ کہتی ہے تمھیں مجھ سے محبت اس قدر کیوں ہے
کہ میں اک عام سی لڑکی تمھیں کیوں خاص لگتی ہوں
میں کہتا ہوں کبھی خود کو میریآنکھوں سے تم دیکھو
میری دیوانگی کیوں ہے یہ خود ہی جان جاو گی

وہ کہتی ہے مجھے وارفتگی سے دیکھتے کیوں ہو
کہ میں خود کو بہت ہی قیمتی محسوس کرتی ہوں
میں کہتا ہوں متاع جاں بہت انمول ہوتی ہے
تمھیں جب دیکھتا ہوں زندگی محسوس کرتا ہوں

وہ کہتی ہے مجھے الفاظ کے جگنو نہیں ملتے
تمھیں بتلا سکوں دل میں مرے کتنی محبت ہے
میں کہتا ہوں محبت تو نگاہوں سے چھلکتی ہے
تمھاری خامشی مجھ سے تمھاری بات کرتی ہے

وہ کہتی ہے بتاو نہ کسے کھونے سے ڈرتے ہو
بتاو کون ہے وہ جس کو یہ موسم بلاتے ہیں
میں کہتا ہوں یہ میری شاعری ہے آئینہ دل کا
ذرا دیکھو بتاو کیا تمھیں اس میں نظرآیا

وہ کہتی ہے کہ عاطف جی بہت باتیں بناتے ہو
مگر سچ ہے کہ یہ باتیں بہت ہی شاد رکھتی ہیں
میں کہتا ہوں یہ سب باتیں فسانے اک بہانہ ہیں
کہ پل کچھ زندگانی کے تمھارے ساتھ کٹ جائیں
پھیر اس کے بعد خاموشی کا دلکش رقص ہوتا ہے
نگاہیں بولتی ہیں اور لب خاموش رہتے ہیں

شاعر: عاطف سعید
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment