Ab Ke Hum Bichde To Shayed Kabhi Khawabon Mein Milein | Urdu Poetry by Ahmad Faraz




Ab Ke Hum Bichray to Shahyed kabhi khawabon mein milen
jis tarah sookhay hue phool kitabon mein milen
Dhoond Ujray hue logon mein wafa ke moti
yeh khazanay tujhe mumkin hai kharabon mein milen
gham e duniya bhi gham e yaar mein shamil kar lo
nasha barhta hai sharabein jo sharabon mein milein
tu khuda hai na mera ishq farishton jaisa
dono insaan hein to kiyon itne hijabon mein milen
aaj hum daar pe khainchay gaye jin baton par
kya ajab kal woh zamanay ko nisabon mein milen
ab na woh mein hoon na woh tu hai na woh maazi hai faraz
jaisay do saye tamanna ke sarabon mein milen

Poet: Ahmad Faraz
Voice: Imran Sherazi

اب کے ہم بچھڑے تو شايد کبھي خوابوں ميں مليں 
جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں ميں مليں

ڈھونڈ اجڑے ہوئے لوگوں ميں وفا کے موتي
يہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں ميں مليں

غم دنيا بھي غم يار ميں شامل کر لو
نشہ بڑھتا ہے شرابيں جو شرابوں ميں مليں

تو خدا ہے نہ ميرا عشق فرشتوں جيسا
دونوں انساں ہيں تو کيوں اتنے حجابوں ميں مليں

آج ہم دار پہ کھينچے گئے جن باتوں پر
کيا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں ميں مليں

اب نہ وہ ہیں، نہ وہ تُو ہے، نہ وہ ماضی ہے فرازؔ
جیسے دو شخص تمّنا کے سرابوں میں ملیں

شاعر: احمد فراز
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment