New Year Urdu Poetry | Aye Naye Saal Bata by Faiz Ahmad Faiz




Aye Naye Saal bata tujh mein naya pan kya hai
har taraf khalaq ne kiyon shor macha rakha hai

roshni din ki wohi taaron bhari raat wohi
aaj hum ko nazar aati hai har aik baat wohi

aasmaan badla hai afsos na badli hai zameen
aik hindsay ka badalna koi jiddat to nahin

aglay barson ki tarah hon ge qareenay tere
kissay maloom nahin baara maheenay tere

janwari farwari aor march mein paray gi sardi
aor aprail may aor june mein ho gi garmi

tera man dehar mein kuch khoye ga kuch paye ga
apni mayaad basar kar ke chala jaye ga

tu naya hai to dikha subha nayi shaam nayi
warna in aankhon ne dekhay hein naye saal kayi

be sabab log detay hein kiyon mubarak badein
kya sabhi bhool gaye hein waqt ki kari yaadein

teri aamad se ghatti hai umar jahan se sab ki
Faiz ne likhi hai yeh nazam niralay dhab ki

Poet: Faiz Ahmad Faiz
Voice: Imran Sherazi

آر جے عمران شیرازی کی آواز میں اردو شاعری

اے نئے سال بتا تجھ میں نیا پن کیا ہے
ہر طرف خلق نے کیوں شور مچا رکھا ہے

روشنی دن کی وہی تاروں بھری رات وہی
آج ہم کو نظر آتی ہے ہر ایک بات وہی

آسماں بدلا ہے افسوس نہ بدلی ہے زمیں
ایک ہندسے کا بدلنا کوئی جدت تو نہیں

اگلے برسوں کی طرح ہوں گے قرینے تیرے
کسے معلوم نہیں بارہ مہینے تیرے

جنوری فروری اور مارچ میں ہو گی سردی
اور اپریل مئی اور جون میں ہو گی گرمی

تیرا من دہر میں کچھ کھوئے گا کچھ پائے گا
اپنی معیاد بسر کر کے چلا جائے گا

تو نیا ہے تو دکھا نئی صبح شام نئی
ورنہ ان آنکھوں نے دیکھیں ہیں نئے سال کئی

بے سبب لوگ دیتے ہیں کیوں مبارک بادیں
کیا سبھی بھول گئے وقت کی کڑی یادیں

تیری آمد سے گھٹی عمر جہاں سے سب کی
فیضؔ نے لکھی ہے یہ نظم نرالے ڈھب کی

شاعر: فیض احمد فیض
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment