Yeh Zindagi ka Asool Hai | Urdu Poetry






Yeh Zindagi ka Asool hai jo bichar gaya usay bhool ja
jo mila hai dil se laga ke rakh jo nahin mila usay bhool ja

na woh dhoop tha na woh chandani na charagh tha na woh roshni
woh khiyal tha koi khawab tha woh tha aaina usay bhool ja

woh jo tere dil ke qareeb tha woh na janay kis ka naseeb tha
tujhe hans ke us ne bhula diya to bhi muskara ke usay bhool ja

Voice: Imran Sherazi

آر جے عمران شیرازی کی آواز میں اردو شاعری

یہ زندگی کا اصول ہےجو بچھڑ گیا اسے بھول جا
جو ملا ہے دل سے لگا کے رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا

نہ وہ دھوپ تھا نہ وہ چاندنینہ چراغ تھا نہ وہ روشنی
وہ خیال تھا کوئی خواب تھا وہ تھا آئینہ اسے بھول جا

وہ جو تیرے دل کے قریب تھا وہ نہ جانے کس کا نصیب تھا
تجھے ہنس کے اس نے بھلا دیا تو بھی مسکرا کے اسے بھول جا

شاعر: نامعلوم
آواز : عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment