2 Lines Shayari | Two Lines Sad Urdu Poetry by RJ Imran Sherazi | Part 1




dil ne socha tha usay toot ke chahen ge
such mano! toote bhi bohat aor chaha bhi bohat

mujhe chhor kar woh khush hai to shikayat kaisi
ab mein usay khush bhi na dekhun to mohabbat kaisi

chhor diya hum ne hamesha k liye us ki aarzu karna
jis ko mohabbat ki qadar na ho us ko duaon mein kya mangna

mohabbat aor mout ki pasand to dekho
aik ko dil chahie aor doosre ko dharkan

taskeen e mohabbat k faqat do hi tareeqe thay
ya dil na bana hota ya tum na bane hotay

nazar se door ho kar bhi yeh tera rubaru rehna
kisi k pass rehnay ka saleeqa ho to aisa ho

sari dunya ki mohabbat se kinara kar ke
hum ne rakha hai faqat khud ko tumhara kar k

dua karna dam bhi isi tarah nikle
jis tarah tere dil se hum nikle

ik yeh khawaish k koi zakham na dekhe dil ka
ik yeh hasrat k koi dekhne wala hota

rah takte hue jab thak gayi aankhen meri
phir use dhoondhne meri aankh k aansu nikle

aye buray waqt zara adab se paish aa
waqt nahin lagta waqt badlne mein

mohabbatein aor bhi barh jati hein juda hone se
tum sirf meri ho is baat ka khiyal rakhna

rooth jane ki ada hum ko bhi aati hai
kash hota koi hum ko bhi manane wala

nahin pasand mohabbat mein milawat mujh ko
agar woh mera hai to khawab bhi mere dekhay

koi shikwah nahin tum se agar ho bhi to kya hasil
wohi rasmi sa ik jumla meri majbooriyan samjho

chalo ik aor dunya mein tumhare saath chalte hein
jahan halaat kuch bhi hon magar hum sath rehte hon

mujhe acha lagta hai tera naam apne naam k sath
jaisay subha juri ho kisi haseen sham k sath

tujh se karta hoon mulaqat simatne k liye
tujh se milta hoon to kuch aor bikhar jaata hoon

Voice: Imran Sherazi

دل نے سوچا تھا اسے ٹوٹ کے چاہیں گے
سچ مانو ٹوٹے بھی بہت چاہا بھی بہت

مجھے چھوڑ کر وہ خوش ہے تو شکایت کیسی
اب میں اسے خوش بھی نہ دیکھوں  تو محبت کیسی

چھوڑ دیا ہم نے ہمیشہ کے لیے اس کی آرزو کرنا
جس کو محبت کی قدر نہ اس کو دعاوں میں کیا مانگنا

محبت اور موت کی پسند تو دیکھو
ایک کو دل چاہیئے اور دوسرے کو دھڑکن

تسکین محبت کے فقط دو ہی طریقے تھے
یا دل نہ بنا ہوتا یا تم نہ بنے ہوتے

نظر سے دور ہو کر بھی یہ تیرا روبرو رہنا
کسی کے پاس رہنے کا سلیقہ ہو تو ایسا ہو

ساری دنیا کی محبت سے کنارہ کر کے
ہم نے رکھا ہے فقط خود کو تمھارا کر کے

دعا کرنا دم بھی اسی طرح نکلے
جس طرح تیرے دل سے ہم نکلے

اک یہ خواہش کہ کوئی زخم نہ دیکھے دل کا
اک یہ حسرت کہ کوئی دیکھنے والا ہوتا

راہ تکتے ہوئے جب تھک گئی آنکھیں میری
پھر اسے ڈھونڈنے میری آنکھ سے آنسو نکلے

اے برے وقت ذرا ادب سے پیش آ
وقت نہیں لگتا وقت بدلنے میں

محبتیں اور بھی بڑھ جاتی ہیں جدا ہونے سے
تم صرف میری ہو اس بات کا خیال رکھنا

روٹھ جانے کی ادا ہم کو بھی آتی ہے
کاش ہوتا کوئی ہم کو بھی منانے والا

نہیں پسند محبت میں ملاوٹ مجھ کو
اگر وہ میرا ہے تو خواب بھی میرے دیکھے

کوئی شکوہ نہیں تم سے اگر ہو بھی تو کیا حاصل
وہی رسمی سا اک جملہ میری مجبوریاں سمجھو

چلو اک اور دنیا میں تمھارے ساتھ چلتے ہیں
جہاں حالات کچھ بھی ہوں مگر ہم ساتھ رہتے ہوں

مجھے اچھا لگتا ہے تیرا نام اپنے نام کے ساتھ
جیسے صبح جڑی ہو کسی حسیں شام کے ساتھ

تجھ سے کرتا ہوں ملاقات سمٹنے کے لیے
تجھ سے ملتا ہوں تو کچھ اور بکھر جاتا ہوں

آواز: عمران شیرازی

No comments :

No comments :

Post a Comment