Ab Bhala Chhor Ke Ghar Kya Karte | Urdu Poetry by Parveen Shakir





ab bhala chhor ke ghar kya kartay
sham ke waqt safar kya kartay

teri masroofiyatein jantay hein
apnay aanay ki khabar kya kartay

jab sitare hi mil nahin paaye
le ke hum shams o qamar kya karte

woh musafir hi khuli dhoop ka tha
saaye phaila ke shajar kya karte

khaak hi awal o aakhir theri
kar ke zaray ko gohar kya karte

raaye pehlay hi bana li tum ne
dil mein ab hum tere ghar kya karte 

Poetry: Parveen Shakir
Voice: Imran Sherazi

آر جے عمران شیرازی کی آواز میں اردو شاعری 

اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے

تیری مصروفیتیں جانتے ہیں
اپنے آنے کی خبر کیا کرتے

جب ستارے ہی مل نہیں پائے
لے کے ہم شمس و قمر کیا کرتے

وہ مسافر ہی کھلی دھوپ کا تھا
سائے پھیلا کے شجر کیا کرتے

خاک ہی اول و آخر ٹھہری
کر کے ذرے کو ہم گوہر کیا کرتے

رائے پہلے ہی بنا لی تم نے
دل میں اب ہم تیرے گھر کیا کرتے

شاعرہ: پروین شاکر
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment