Kal Chaudhvin Ki Raat Thi Shab Bhar Raha Charcha Tera | Urdu Poetry by Ibne Insha




Ibne Insha Shayari | Kal Chaudhvin Ki Raat Thi Shab Bhar Raha Charcha Tera - Urdu/ Hindi Poetry (Ghazal) with Lyrics by R J Imran Sherazi

kal chaudhvin ki raat thi shab bhar raha charcha tera
kuch ne kaha yeh chand hai kuch ne kaha chehra tera

hum bhi wohen mojood thay hum se bhi sab poocha kiye
hum hans diye hum chup rahay manzoor tha pardah tera

iss shehar mein kis se milein hum se to chhooti mehfilein
har shakhs tea naam le har shakhs dewana tera

kuchay ko tere chhor ke jogi hi ban jain magar
jungle tere parbat tere basti teri sehra tera

tu bawafa tu mehrban hum aor tujh se bad guman
hum ne to poocha tha zara yeh sasf kiyon thera tera

beshak isi ka dosh hai kehta nahin khamosh hai
tu aap kar aisi dawa bemar ho acha tera

hum aor rasm e bandgi aashuftagi uftaadagi
ehsaan hai kya kya tera aye husn-e-beparwah tera

do ashk janay kiss liye palkon pe aa kar tik gaye
altaf ki barish teri ikram ka dariya tera

aye be darigh o be amaan hum ne kabhi ki hai fughan
hum ko teri wehshat sahi hum ko sahi sauda tera

hum par yeh sakhti ki nazar hum hein faqir e rehguzar
rasta kabhi roka tera daman kabhi thama tera

haan haan teri soorat haseen laiken tu aisa bhi nahin
ik shakhs ke ishaar se shohra hua kya kya tera

bedard sunni ho to chal kehta hai kya achi ghazal
aashiq tera ruswa tera shaair tera Insha tera

Poet: Ibne Insha
Voice: Imran Sherazi


آر جے عمران شیرازی کی آواز میں اردو شاعری

کل چودھویں کی رات تھی، شب بھر رہا چرچا تیرا 
کچھ نے کہا یہ چاند ہے، کچھ نے کہا چہرا تیرا 
ہم بھی وہیں موجود تھے، ہم سے بھی سب پُوچھا کیے 
ہم ہنس دیئے، ہم چُپ رہے، منظور تھا پردہ تیرا 
اس شہر میں کِس سے مِلیں، ہم سے تو چُھوٹیں محفلیں 
ہر شخص تیرا نام لے، ہر شخص دیوانہ تیرا 
کُوچے کو تیرے چھوڑ کے جوگی ہی بن جائیں مگر 
جنگل تیرے، پربت تیرے، بستی تیری، صحرا تیرا 
تُو باوفا، تُو مہرباں، ہم اور تجھ سے بدگماں؟ 
ہم نے تو پوچھا تھا ذرا، یہ وصف کیوں ٹھہرا تیرا 
بے شک اسی کا دوش ہے، کہتا نہیں خاموش ہے 
تو آپ کر ایسی دوا، بیمار ہو اچھا تیرا 
ہم اور رسمِ بندگی؟ آشفتگی؟ اُفتادگی؟ 
احسان ہے کیا کیا تیرا، اے حسنِ بے پروا تیرا 
دو اشک جانے کِس لیے، پلکوں پہ آ کر ٹِک گئے 
الطاف کی بارش تیری اکرام کا دریا تیرا 
اے بے دریغ و بے اَماں، ہم نے کبھی کی ہے فغاں؟ 
ہم کو تِری وحشت سہی ، ہم کو سہی سودا تیرا 
ہم پر یہ سختی کی نظر، ہم ہیں فقیرِ رہگُزر 
رستہ کبھی روکا تیرا دامن کبھی تھاما تیرا 
ہاں ہاں تیری صورت حسیں، لیکن تُو ایسا بھی نہیں 
اس شخص کے اشعار سے شہرہ ہوا کیا کیا تیرا 
بے درد، سننی ہو تو چل، کہتا ہے کیا اچھی غزل 
عاشق تیرا، رُسوا تیرا، شاعر تیرا، اِنشا تیرا

شاعر: ابن انشاء
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment