Kuch to Hawa Bhi Sard Thi Kuch Tha Tera Khiyal Bhi | Urdu Poetry by Parveen Shakir




Parveen Shakir Shayari | Kuch to Hawa Bhi Sard Thi Kuch Tha Tera Khiyal Bhi - Urdu/ Hindi Poetry (Ghazal) with Lyrics by R J Imran Sherazi

Kuch To Hawa Bhi Sard Thi Kuch Tha Tera Khiyal Bhi
Dil Ko khushi Ke saath saath hota raha malaal bhi

baat woh aadhi raat ki raat woh pooray chaand ki
Chaand bhi ain chait ka us pe tera jamaal bhi

sab se nazar bacha ke woh mujh ko kuch aisay dekhta
aik dafa to ruk gayi gardish-e-mah-o-saal bhi

dil to chamak sakay ga kya phir bhi tarash ke dekh lein
Sheesha Garaan-e-Shehar ke haath ka yeh kamaal bhi

us ko na pa sakay thay jab dil ka ajeeb haal tha
ab jo palat ke dekhiye baat thi kuch muhaal bhi

meri talab tha aik shakhs woh jo nahin mila to phir
haath dua se yoon gira bhool gaya sawaal bhi

uss ki sukhan taraazian mere liye bhi dhaal thein
uss ki hansi mein chuph gaya apnay ghamon ka haal bhi

shaam ki na samjh hawa pooch rahi hai ik pata
mouj-e-hawa-e-kue yaar kuch to mera khiyal bhi

Poet: Parveen Shakir
Voice: Imran Sherazi

آر جے عمران شیرازی کی آواز میں اردو شاعری

کچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا ترا خیال بھی
دل کو خوشی کے ساتھ ساتھ ہوتا رہا ملال بھی

بات وہ آدھی رات کی رات وہ پورے چاند کی
چاند بھی عین چیت کا اس پہ ترا جمال بھی

سب سے نظر بچا کے وہ مجھ کو کچھ ایسے دیکھتا
ایک دفعہ تو رک گئی گردش ماہ و سال بھی

دل تو چمک سکے گا کیا پھر بھی ترش کے دیکھ لیں
شیشہ گرانِ شہر کے ہاتھ کا یہ کمال بھی

اس کو نہ پا سکے تھے جب دل کا عجیب حال تھا
اب جو پلٹ کے دیکھیے بات تھی کچھ محال بھی

میری طلب تھا ایک شخص وہ جو نہیں ملا تو پھر
ہاتھ دعا سے یوں گرا بھول گیا سوال بھی

شام کی نا سمجھ ہوا پوچھ رہی ہے اک پتہ
موج ہوا کوئے یار کچھ تو میرا خیال بھی

اس کی سخن طرازیاں میرے لیے بھی ڈھال تھیں
اس کی ہنسی میں چھپ گیا اپنے غموں کا حال بھی

شاعرہ: پروین شاکر
آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment