Tumhen Yad Ho Ke Na Yad Ho | Urdu Poetry by Momin Khan Momin




Momin Khan Momin Urdu Poetry | Tumhein Yaad Ho Ke Na Yaad Ho with Music - Urdu/ Hindi Poetry by RJ Imran Sherazi Wo jo hum mein tum mein qarar tha tumhen yaad ho ke na yaad ho wohi yani wada nibah ka tumhen yaad ho ke na yaad ho wo naye gile wo shikayaten wo maze maze ke hikayaten wo har ek baat pe ruthana tumhen yaad ho ke na yaad ho koi baat aisi agar hui jo tumhare jee ko buri lagi to bayan se pahale hi bhulana tumhen yaad ho ke na yaad ho suno zikr hai kai saal ka, koi wada mujh se tha aap ka wo nibahane ka to zikr kya, tumhen yaad ho ke na yaad ho kabhi hum mein tum mein bhi chah thi, kabhi hum se tum se bhi reh thi kabhi hum bhi tum bhi the aashna, tumhen yaad ho ke na yaad ho hue ittefaq se gar baham, wo wafa jatane ko dam-ba-dam gila-e-malamat-e-arqaba, tumhen yaad ho ke na yaad ho wo jo lutf mujh pe the beshtar, wo karam ke hath mere hath par mujhe sab hain yaad zara zara, tumhen yaad no ki na yaad ho kabhi baithe sab hain jo ru-ba-ru to isharaton hi se guftagu wo bayan shauq ka baramala tumhen yaad ho ki na yaad ho wo bigadana vasl ke raat ka, wo na manana kisi baat ka wo nahiin nahi ke har aan ada, tumhen yaad ho ki na yaad ho jise aap ginte the aashna jise aap kahate the bavafa main wohi hun “momin”-e-mubtala tumhen yaad ho ke na yaad ho Poet: Momin Khan Momin Voice: Imran Sherazi آر جے عمران شیرازی کی آواز میں میوزک کے ساتھ اردو شاعری وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو وہی یعنی وعدہ نباہ کا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو وہ جو لطف مجھ پہ تھے پیش تر، وہ کرم کہ تھا میرے حال پر مجھے سب یاد ہے ذرا ذرا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو کبھی بیٹھے جو سب میں روبرو ، تو اشاروں ہی میں گفتگو وہ بیان شوق کا برملا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو ہوئے اتفاق سے گر بہم ، تو وفا جتانے کو دم بہ دم گلہ ملامتِ اقرباء ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو کوئی ایسی بات ہوئی اگر کہ تمہارے جی کو بری لگی تو بیاں سے پہلے ہی بھولنا ،تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو کبھی ہم میں تم میں بھی چاہ تھی ، کبھی ہم میں تم میں بھی راہ تھی کبھی ہم بھی تم بھی تھے آشنا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو جسے آپ گنتے تھے آشنا ، جسے آپ کہتے تھے باوفا میں وہی ہوں مومنِ مبتلا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو شاعر: مومن خان مومن آواز: عمران شیرازی


No comments :

No comments :

Post a Comment